spot_img
Monday, August 15, 2022
spot_img

-

ہومLatest Newsنئی تحق: ہاتھی کے جین سے کینسر کا علاج ممکن

نئی تحق: ہاتھی کے جین سے کینسر کا علاج ممکن

- Advertisement -
- Advertisement -

اس تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ کیوں زمین کے سب سے بڑے زمینی جانور یعنی ہاتھی میں انسانوں کے مقابلے میں کینسر کا امکان پانچ گنا کم ہوتا ہے۔

ایک نئی سائنسی تحقیق میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ ہاتھیوں میں موجود ایک جین سے کینسر کا علاج ممکن ہے۔

سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ ہاتھیوں کے جسم میں ٹیومر سے لڑنے والے پروٹینز کی ایک فوج موجود ہے جو میوٹیٹڈ سیلز (کینسر کے خلیات) کو تباہ کر دیتے ہیں۔

اس تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ کیوں زمین کے سب سے بڑے زمینی جانور یعنی ہاتھی میں انسانوں کے مقابلے میں کینسر کا امکان پانچ گنا کم ہوتا ہے۔

ہاتھی کے ان جینز کو استعمال کرتے ہوئے کینسر، جو دنیا کے سب سے زیادہ مہلک امراض میں سے ایک ہے، کے لیے ایک سائز کی تھراپی تیار کی جا سکتی ہے جو اس کی تمام اقسام کے لیے سود مند ہو گی۔

آکسفورڈ یونیورسٹی سے وابستہ اور اس تحقیق کے شریک مصنف پروفیسر فرٹز وولراتھ نے کہا: ’یہ پیچیدہ اور دلچسپ مطالعہ ظاہر کرتا ہے کہ ہاتھیوں میں (ان جینز) کا کس قدر متاثر کن حجم سے بھی کہیں زیادہ حصہ موجود ہے اور یہ کتنا ضروری ہے کہ ہم ان جانوروں کو نہ صرف محفوظ رکھیں بلکہ ان کا تفصیلی مطالعہ بھی کریں۔‘

ان کے بقول: ’آخر کار ان (ہاتھیوں) کے جینیات اور فزیالوجی سب ارتقائی تاریخ کے ساتھ ساتھ آج کے ماحولیات، خوراک اور رویے سے تبدیل ہوئے ہیں۔‘

اپنے پانچ ٹن وزنی جسم اور لمبی عمر کے باوجود ہاتھی کینسر کے خلاف زیادہ مزاحمت کا مظاہرہ کرتے ہیں جن میں اس مرض سے اموات کی شرح محض پانچ فیصد سے بھی کم ہے جبکہ انسانوں میں یہ شرح 25 فیصد تک ہے۔

اس رجحان نے کئی دہائیوں سے ماہرین حیاتیات کو حیران کر رکھا ہے کیوں کہ اصولاً حجم میں بڑی مخلوق کو زیادہ خطرہ ہونا چاہیے۔

خلیے کسی بھی جاندار میں زندگی بھر تقسیم ہوتے رہتے ہیں اس لیے ہر ایک کو ٹیومر کا خطرہ ہوتا ہے۔

لیکن ہاتھیوں کو اپنے والدین سے P53 نامی جین کے 40 ورژن وراثت میں ملتے ہیں جن میں سے 20 ماں اور 20 باپ کی طرف سے ملتے ہیں۔ انہیں ‘جینوم کا گارڈین’ کہا جاتا ہے۔

باقی تمام میملز میں ان جینز کی تعداد دو ہوتی ہے۔

بائیو کیمیکل تجزیہ اور کمپیوٹر سمیلیشن سے بھی ثابت ہوا ہے کہ 40 ورژن جینز ساختی طور پر قدرے مختلف ہوتے ہیں۔

ہاتھیوں میں یہ جینز کینسر کے خلاف سرگرمی کی ہماری معمول کے دو جینز کے مقابلے میں بہت وسیع رینج فراہم کرتے ہیں۔ انسانوں اور دیگر تمام میملز میں انہیں یہ جین ایک ماں اور ایک باپ کی طرف سے ملتے ہیں۔

فرانس کے نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ اینڈ میڈیکل ریسرچ سے وابستہ اور اس تحقیق کے شریک مصنف پروفیسر رابن فاریئس کا کہنا ہے: ’یہ ہماری معلومات کے لیے ایک دلچسپ پیش رفت ہے کہ ہاتھی میں پائے جانے والا p53 نامی جین کس طرح کینسر کی نشوونما کو روکنے میں معاون ہے۔‘

ان کے بقول: ’انسانوں میں یہی p53 پروٹین یہ فیصلہ کرنے کے لیے ذمہ دار ہے کہ آیا خلیات کو پھیلنا بند کر دینا چاہیے یا خود مر جانا جانا چاہیے لیکن p53 یہ فیصلہ کیسے کرتا ہے اس کی وضاحت کرنا مشکل ہے۔

ہاتھیوں میں متعدد p53 شکلوں کا وجود مختلف صلاحیتوں کے ساتھ ٹیومر کو ختم کرنے والی سرگرمی پر نئی روشنی ڈالنے کے لیے ایک دلچسپ اور نیا طریقہ پیش کرتا ہے۔

جرنل مالیکیولر بائیولوجی اینڈ ایوولوشن میں شائع ہونے والے نتائج نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ p53 پروٹین کیسے متحرک ہوتے ہیں۔

وہ ایسی ادویات تیار کرنے کا دروازہ کھولتے ہیں جو کینسر پیدا کرنے والے ماحول کے خلاف اس کی حساسیت اور ردعمل کو بڑھاتی ہیں۔

سپین میں قائم Universitat Autònoma de Barcelona یونیورسٹی سے منسلک اور اس تحقیق کے مرکزی مصنف ڈاکٹر کونسٹنٹینوس کاراکوسٹس نے اس حوالے سے بتایا کہ ’تصوراتی نظریے کے مطابق ساختی طور پر تبدیل شدہ p53 پولز کا بڑھنا اجتماعی طور پر یا ہم آہنگی سے خلیے میں متنوع تناؤ کے ردعمل کو منظم کرتا ہے جو سیل ریگولیشن کا ایک متبادل میکانسٹک ماڈل قائم کرتا ہے جس کی بائیو میڈیکل ایپلی کیشنز کے لیے ممکنہ اہمیت ہے۔‘

ہاتھی کو ان کے قیمتی دانتوں کی وجہ سے بے دریغ شکار کیا جاتا ہے جس سے یہ معدومیت کے شدید خطرے سے دوچار ہیں۔

گذشتہ صدی کے دوران ہاتھیوں کی آبادی میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے۔ اب افریقہ میں تقریباً چار لاکھ اور ایشیا میں ایک اندازے کے مطابق صرف 30 ہزار ہاتھی رہ گئے ہیں۔

ایک صدی پہلے دونوں براعظموں میں ہاتھی عام تھے۔ ہاتھیوں کو ان کےقدرتی مسکن میں کمی اور گلوبل وارمنگ سے مزید خطرات کا سامنا ہے۔

- Advertisement -

Related articles

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

Stay Connected

6,000مداحپسند
300فالورزفالور
3,061فالورزفالور
400سبسکرائبرزسبسکرائب کریں

Latest posts