spot_img
Monday, August 15, 2022
spot_img

-

ہومLatest Newsجس جہاز میں بیٹھیں وہی جہاز ڈبو دیا، دنیا کی ایسی خاتون...

جس جہاز میں بیٹھیں وہی جہاز ڈبو دیا، دنیا کی ایسی خاتون جس کی قسمت نے ٹائی ٹینک سمیت کئی جہاز ڈبو دیے

- Advertisement -
- Advertisement -

موت اور زندگی کے کھیل میں کب کون جیت جائے یہ کسی کو نہیں پتہ ہوتا مگر کچھ خوش نصیب لوگ ایسے بھی ہوتے ہیں جو کہ اس کھیل میں بار بار موت سے آنکھ مچولی کھیلتے ہیں اور اس کو ہرا کر آجاتے ہیں ایسی ہی ایک آئرش خاتون وائلٹ جیسوپ بھی تھیں-

موت کسی کا انتظار نہیں کرتی لیکن وائلٹ جیسوپ کی بات اور تھی وائلٹ جیسوپ کی پیدائش 1887 مین ارجنٹینا میں ہوئی۔ اس کی پیدائش اس حوالے سے منفرد تھی کہ وہ اپنے ماں باپ کی ساتویں بچی تھی اور اس سے قبل چھ بچے پیدا ہوتے ہی مر گئے تھے مگر وائلٹ واحد بچی تھی جو کہ زندہ بچی-

مگر اس کے بعد بچپن میں ہی وہ ٹی بی میں مبتلا ہو گئی اس زمانے میں ٹی بی ایک لاعلاج مرض تھا مگر اس کے باوجود وائلٹ اس بیماری کو بھی شکست دے کر زندہ بچنے میں کامیاب ہوگئی-

پہلی نوکری پہلا حادثہ

وائلٹ نے 23 سال کی عمر میں 1910 میں پہلی نوکری آر ایم ایس اولمپک نامی جہاز میں بطور اسٹیورڈ اختیار کی اس کی والدہ بھی اسی پیشے سے منسلک تھیں مگر پہلے ہی سفر میں برطانوی جہاز نے اولمپک پر حملہ کر دیا جس کی وجہ سے جہاز کریش ہو گیا اور بمشکل کچھ ہی افراد جہاز کی اس تباہی کے بعد زندہ بچ سکے جن میں سے وائلٹ بھی ایک تھیں –

دوسرا جہاز دوسرا حادثہ

کوئی عام انسان ایک بار موت کے منہ سے بچ نکلنے کے بعد دوبارہ ایسے خطرناک پیشے کو اختیار نہیں کرنا چاہے گا مگر وائلٹ کو تو موت کو ہرا کر مزا آتا تھا- اس وجہ سے جب 1912 میں دنیا کا سب سے بڑا جہاز ٹائی ٹینک سفر کے لیے تیار ہوا تو وائلٹ نے ایک بار پھر بطور اسٹیورڈ اپنی خدمات پیش کر دیں- اور ایک بار پھر جب ٹائی ٹینک برفانی چٹان سے ٹکرا کر دو ٹکڑے ہوا تو اس بار وائلٹ کی جان بچانے کے لیے عورتیں اور بچے پہلے کا اصول کام آیا اور لائف بوٹ میں وائلٹ بیٹھ کر اپنی جان بچانے میں کامیاب ہو گئيں-

تیسرا جہاز اور تیسرا حادثہ

تیسری بار جب وائلٹ نے اپنے گھر والوں کو بتایا کہ وہ ایچ ایم ایچ ایس بریٹینیک میں نوکری اختیار کرنے کا بتایا تو اس بار اس کے گھر والوں نے اس کو روکتے ہوئے کہا کہ ان کو لگ رہا ہے کہ اس بار بھی ان کو جہاز ڈوبتے ہوۓ نظر آرہا ہے- مگر ان کی بات ان سنی کرتے ہوئے وائلٹ نے اس جہاز مین نوکری اختیار کر لی-

یہ جہاز پہلی جنگ عظیم کے موقع پر مریضوں کے علاج کے لیے بنایا گیا تھا لیکن بد قسمتی سے یہ جہاز بھی صرف 55 منٹ ہی سفر کر سکا اور ایک دھماکے کے ساتھ ڈوب گیا اور اس کے ایک ہزار مسافروں میں سے 30 ہلاک ہو گئے-

- Advertisement -

Related articles

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

Stay Connected

6,000مداحپسند
300فالورزفالور
3,061فالورزفالور
400سبسکرائبرزسبسکرائب کریں

Latest posts